ہاتھ چھوٹیں بھی تو رشتے نہیں چھوڑا کرتے 

ہاتھ چھوٹیں بھی تو رشتے نہیں چھوڑا کرتے 
وقت کی شاخ سے لمحے نہیں توڑا کرتے 

جس کی آواز میں سِلوٹ ہو، نگاہوں میں شکن
ایسی تصویر کے ٹکڑے نہیں جوڑا کرتے

شہد جینے کا مِلا کرتا ہے تھوڑا تھوڑا
جانے والوں کیلئے دِل نہیں تھوڑا کرتے

لگ کے ساحل سے جوبہتا ہے اُسے بہنے دو
ایسے دریا کا کبھی رُخ نہیں موڑا کرتے 

.
دلبر 

Comments

comments

//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js

اپنا تبصرہ بھیجیں