چاند سےگرد و خاک لانے والے پہلے بیگ کی نیلامی

امریکی خلا باز نیل آرمسٹرانگ نے چاند پر پہنچ کر پہلی بار چاند کی گرد و خاک کے نمونے جمع کرنے اور زمین پر لانے کے لیے جو بیگ استعمال کیا تھا اس بیگ کو نیو یارک میں نیلامی کے لیے پیش کیا گیا جو کہ 18 لاکھ ڈالر میں فروخت ہوا ہے۔

یہ بیگ کسی بھی طرح کی آلودگی سے محفوظ رکھنے کے لیے بنایا گیا تھا اس بیگ کا تعلق سنہ 1969 کے اپولو 11 خلائی مشن سے ہے جسے سوتبی کے نیلامی گھر میں ایک گمنام شخص نے خریدا۔

بیگ سفید رنگ کا ہے اور اس میں چاند سے لائی گئی چھوٹی چھوٹی کنکریاں اور گرد غبار اب بھی اسی طرح موجود ہے۔

اپولو مشن 11 میں سے صرف یہی ایک بیگ ایک ذاتی شخص کی ملکیت میں تھا اور اس بیگ کو لے کر عدالت میں ایک مقدمہ بھی چلا کہ آخر اس کا اصل مالک کون ہے اور عدالتی فیصلہ آجانے کے بعد ہی اس کو نیلامی پیش کیا گیا۔

جب چاند کے مشن سے خلائی گاڑی زمین پر واپس آئی تو اس میں سے نکالی جانے والی تقریباً تمام چیزیں سمتھ سونین میوزیم میں بھیج دی گئی تھیں۔

لیکن چونکہ اس بیگ کو غلطی سے ان تمام اشیا کی فہرست میں شامل نہیں کیا گيا اس لیے یہ بیگ ایک بکسے کا اندر جانسن سپیس سینٹر میں ہی پڑا رہ گيا۔

سنہ 2015 میں حکومت نے جب سپیس سینٹر کی کچھ اشیا نیلامی کے لیے پیش کیں تو اس وقت بھی اس کی درست شناخت نہیں ہو پائی اور النوائے کے ایک وکیل نے اسے محض 995 ڈالر میں خرید لیا تھا۔

بعد میں ناسا نے اس بیگ کو واپس حاصل کرنے کی بڑی کوششیں کیں لیکن رواں برس کے شروع میں ایک وفاقی جج نے اپنے اہم فیصلے میں کہا کہ بیگ کا مالک اصل میں اسے خریدنے والا ہی ہے۔

عدالتی فیصلہ آنے کے بعد ہی مالک نے اسے سوتبی میں نیلام کرنے کا فیصلہ کیا۔

Comments

comments

//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js

اپنا تبصرہ بھیجیں