مدت سے تو دلوں کی ملاقات بھی گئی

مدت سے تو دلوں کی ملاقات بھی گئی ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺎ ﭘﺎﺱ ﺗﮭﺎ ﺳﻮ ﻣﺪﺍﺭﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﮔﺌﯽ ﮐﺘﻨﮯ ﺩﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﺐِ ﻭﺻﺎﻝ ﺑﺎﮨﻢ ﺭﮨﯽ ﻟﮍﺍﺋﯽ ﺳﻮ ﻭﮦ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﮔﺌﯽ ﮐﭽﮫ ﮐﮩﺘﮯ ﺁ ﮐﮯ ﮨﻢ ﺗﻮ ﺳﻨﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﻭﮮ ﺧﻤﻮﺵ ﺍﺏ ﮨﺮ ﺳﺨﻦ ﭘﮧ ﺑﺤﺚ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﮔﺌﯽ ﻧﮑﻠﮯ ﺟﻮ مزید پڑھیں