بہار رُت میں اجاڑ رستے۔۔

بہار رُت میں اجاڑ رستے۔۔ تکا کرو گے تو رو پڑو گے۔۔ کسی سے ملنے کو جب بھی محسن۔۔ سجا کرو گے تو رو پڑو گے۔۔ تمھارے وعدوں نے یار مجھ کو ۔۔ تباہ کیا ہے کچھ اس طرح سے۔۔ کہ زندگی میں جو پھر کسی سے۔۔ دغا کرو گے تو رو پڑو گے۔۔ میں مزید پڑھیں

نظارہ جمال میں شامل ہے آئینہ

نظارہ جمال میں شامل ہے آئینہ اے شام قُرب اس کو نظر چھو تو لے مگر  مشکل یہ ہے کہ راہ میں حائل ہے آئینہ؎ پھر اہل دل کو ہےتری بخشش کا انتظار  پھر  تیرے خدوخال کا سائل ہے آئینہ؎ اک دن تو بن سنورکےمری سانس میں اتر  اسں ریت ریت سانس کا حاصل ہے مزید پڑھیں

چلو چھوڑو!

چلو چھوڑو! محبت جھوٹ ہے عہدِ وفا اک شغل ہے بے کار لوگوں کا ’’طَلب ‘‘ سوکھے ہوئے پتوں کا بے رونق جزیرہ ہے ’’ خلش ‘‘ دیمک زدہ اوراق پر بوسیدہ سطروں کا ذخیرہ ہے ’’ خُمارِ وصل ‘‘ تپتی دھوپ کے سینے پہ اُڑتے بادلوں کی رائیگاں بخشش! ’’ غبارِ ہجر ‘‘ صحرا مزید پڑھیں

ہم نے غزلوں میں تمہیں ایسے پکارا محسن…

ہم نے غزلوں میں تمہیں ایسے پکارا محسن… جیسے تم ہو کوئی قسمت کا ستارا محسن.. اب تو خود کو بهی نکهارا نہیں جاتا ہم سے… وہ بهی کیا دن تهے کہ تجھ کو بهی سنوارا محسن… اپنے خوابوں کو اندھیروں کے حوالے کر کے.. ہم نے صدقہ تیری آنکهوں کا اتارا محسن… ہم کو مزید پڑھیں

وہی درپیش ہے پھر زندگی، خوابوں خیالوں کی

وہی درپیش ہے پھر زندگی، خوابوں خیالوں کی کہاں ہے اب تمہاری وہ، محبّت اتنے سالوں کی ؟ اگر میرے مقدر میں، اندھیرا ہی اندھیرا تھا کہانی کیوں سنائی تھی، مجھے تم نے اجالوں کی بڑا ہے فرق دونوں میں، مگر دلچسپ ہیں دونوں تیری دنیا جوابوں کی، میری دنیا سوالوں کی تمھیں جب سے مزید پڑھیں

سلسلے جو وفا کے رکھتے ہیں

سلسلے جو وفا کے رکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ حوصلے انتہا کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رکھتے ہیں !!! ہم کبھی بد دعا نہیں دیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔ !! ہم سلیقے دعا کے ۔۔۔۔۔۔۔ رکھتے ہیں !!! اُن کے دامن بھی جلتے دیکھے ہیں ۔۔۔۔۔ وہ جو ۔۔۔۔۔۔۔۔ دامن بچا کہ رکھتے ہیں !!! ہم نہیں ہیں شکست کے قائل !! ہم سفینے مزید پڑھیں

دوستو پھر وہی ساعت وہی رُت آئی ہے

دوستو پھر وہی ساعت وہی رُت آئی ہے ہم نے جب اپنے ارادوں کا علَم کھولا تھا دل نے جب اپنے ارادوں کی قسم کھائی تھی شوق نے جب رگِ دَوراں میں لہُو گھولا تھا پھر وہی ساعتِ صد رنگ وہی صُبحِ جُنوں اپنے ہاتھوں میں نئے دور کی سوغات لیے محملِ شامِ غریباں سے مزید پڑھیں

نہ وہ مِلتا ہے نہ مِلنے کا اِشارہ کوئی

نہ وہ مِلتا ہے نہ مِلنے کا اِشارہ کوئی کیسے اُمّید کا چمکے گا سِتارہ کوئی حد سے زیادہ، نہ کسی سے بھی محبّت کرنا جان لیتا ہے سدا ، جان سے پیارا کوئی بیوفائی کے سِتم تم کو سمجھ آجاتے  کاش ! تم جیسا اگر ہوتا تمھارا کوئی چاند نے جاگتے رہنے کا سبب مزید پڑھیں

یہ تیری جھیل سی آنکھوں میں رت جگوں کے بھنور

یہ تیری جھیل سی آنکھوں میں رت جگوں کے بھنور یہ تیرے پھول سے چہرے پہ چاندنی کی پھوار یہ تیرے لب یہ دیار یمن کے سرخ عقیق یہ آئینے سی جبیں سجدہ گاہ لیل و نہار یہ نیاز گھنے جنگلوں سے بال تیرے یہ پھولتی ہوئی سرسوں کا عکس گالوں پر یہ دھڑکنوں کی مزید پڑھیں