یہ تیری جھیل سی آنکھوں میں رت جگوں کے بھنور

یہ تیری جھیل سی آنکھوں میں رت جگوں کے بھنور یہ تیرے پھول سے چہرے پہ چاندنی کی پھوار یہ تیرے لب یہ دیار یمن کے سرخ عقیق یہ آئینے سی جبیں سجدہ گاہ لیل و نہار یہ نیاز گھنے جنگلوں سے بال تیرے یہ پھولتی ہوئی سرسوں کا عکس گالوں پر یہ دھڑکنوں کی مزید پڑھیں

کسی کی آنکھ جو پر نم نہیں ہے

کسی کی آنکھ جو پر نم نہیں ہے نہ سمجھو یہ کہ اس کو غم نہیں ہے سوادِ درد میں تنہا کھڑا ہوں پلٹ جاؤں مگر موسم نہیں ہے سمجھ میں کچھ نہیں آتا کسی کی اگرچہ گفتگو مبہم نہیں ہے سلگتا کیوں نہیں تاریک جنگل طلب کی لو اگر مدھم نہیں ہے یہ بستی مزید پڑھیں

آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد کیا 

آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد کیا  اپنے اُجڑےہوئے گلشن کو بہت یاد کیا جب کبھی گردش تقدیر نے گھیرا ہے ہمیں  گیسوئے یار کی الجھن کو بہت یاد کیا شمع کی جوت پہ جلتے ہوئے پروانوں نے  اک ترے شعلہ دامن کو بہت یاد کیا جس کے ماتھے پہ نئی صبح کا جھومر مزید پڑھیں

کچھ بھی ہو، وہ اب دِل سے جُدا ہو نہیں سکتے

کچھ بھی ہو، وہ اب دِل سے جُدا ہو نہیں سکتے ہم مُجرم ِتوہِین وفا ہو نہیں سکتے اے موجِ حوادِث ! تجھے معلوُم نہیں کیا ہم اہلِ محبّت ہیں، فنا ہو نہیں سکتے اِتنا تو بتا جاؤ، خفا ہونے سے پہلے وہ کیا کریں جو تم سے خفا ہو نہیں سکتے اِک آپ کا مزید پڑھیں

یہ آنکھ بھی ، یہ خواب بھی ، یہ رات اسی کی 

یہ آنکھ بھی ، یہ خواب بھی ، یہ رات اسی کی  ہر بات پہ یاد آتی ہے ہر بات اسی کی جگنو سے چمکتے ہیں اسی یاد کے دم سے  آنکھوں میں لیے پھرتے ہیں سوغات اسی کی ہر شعلے کے پیچھے ہے اسی آگ کی صورت  ہر بات کے پردے میں حکایات اسی مزید پڑھیں

غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں

غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں تو نے مجھ کو کھو دیا، میں نے تجھے کھویا نہیں نیند کا ہلکا گلابی سا خمار آنکھوں میں تھا یوں لگا جیسے وہ شب کو دیر تک سویا نہیں ہر طرف دیوار و در اور ان میں آنکھوں کے ہجوم کہہ سکے جو دل مزید پڑھیں

میرے ساتھ تم بھی دعا کرو

میرے ساتھ تم بھی دعا کرو ، یوں کسی کے حق میں برا نہ ہو کہیں اور ہو نہ یہ حادثہ ، کوئی راستے میں جدا نہ ہو میرے گھر سے راستے کی سیج تک ، وہ اک آنسو کی لکیر ہے ذرا بڑھ کے چاند سے پوچھنا ، وہ اسی طرف سے گیا نہ مزید پڑھیں

نہ سسی نا میں ہیر پیا

نہ سسی نہ میں ہیر پیا میں بنوں تیری تقدیر پیا پیروں میں باندھے بیٹھی ہوں تیرے عشق کی زنجیر پیا کملی جھلی پھروں میں در در میرا دامن لیر و لیر پیا سپنوں میں کرتی رہتی ہوں اک تاج محل تعمیر پیا میرے من پر قبضہ تیرا ہے میں تیری ہوں جاگیر پیا میں مزید پڑھیں

روٹھا تو شہر خواب کو غارت بھی کرگیا

روٹھا تو شہر خواب کو غارت بھی کرگیا پھرمسکرا کے تازھ شرارت بھی کرگیا منہ زور آندھیوں کی ہتھیلی پہ اک چراغ پیدا مرے لہو میں حرارت بھی کرگیا دل کا نگر اجاڑنے والا ہنر شناس تعمیر حوصلوں کی عمارت بھی کر گیا بوسیدہ بادبان کا ٹکڑا ہوا کے ساتھ طوفاں میں کشتیون کی سفارت مزید پڑھیں

سنو ، ‏تم لوٹ آؤ نا

‏سنو……… ‏تم لوٹ آؤ نا ‏کہ دل ہے درد سے بوجھل ‏سکوں اک پل نہیں ملتا ‏کہیں بھی دل نہیں لگتا… ‏سنو…. ‏سنسان ہوں تم بن ‏بہت ویران ہوں تم بن ‏مجھے سانسیں نہیں آتیں ‏کہ میں بے جان ہوں تم بن.. ‏سنو…. ‏بکھرا ہوا ہوں میں ‏سہارا چاہتا ہوں اب ‏تمہارے لوٹ آنے کا مزید پڑھیں