اے وصل کچھ یہاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

اے وصل کچھ یہاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا
اس جسم کی میں جاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

تو آج میرے گھر میں جو مہماں ہے عید ہے
تو گھر کا میزباں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

کھولی تو ہے زبان مگر اس کی کیا بساط
میں زہر کی دکاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

کیا ایک کاروبار تھا وہ ربط جسم و جاں
کوئی بھی رائیگاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

کتنا جلا ہوا ہوں بس اب کیا بتاؤں میں
عالم دھواں دھواں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

دیکھا تھا جب کہ پہلے پہل اس نے آئینہ
اس وقت میں وہاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

وہ اک جمال جلوہ فشاں ہے زمیں زمیں
میں تا بہ آسماں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

میں نے بس اک نگاہ میں طے کر لیا تجھے
تو رنگ بیکراں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

گم ہو کے جان تو مری آغوش ذات میں
بے نام و بے نشاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

ہر کوئی درمیان ہے اے ماجرا فروش
میں اپنے درمیاں نہ ہوا کچھ نہیں ہوا

جون ایلیا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں